37

تشدد سے جاں بحق طالب علم کی پوسٹ مارٹم رپورٹ

لاہور کےعلاقے گلشنِ راوی میں استاد کے مبینہ تشدد سے جاں بحق طالب علم حنین بلال کی ابتدائی پوسٹ مارٹم رپورٹ سامنے آ گئی۔حنین بلال کی ابتدائی پو سٹ مارٹم رپورٹ کے مطابق اس کے جسم پر خون کے کوئی دھبےبھی نہیں پائے گئے ،تاہم حنین کےجسم کے چند نمونے پیتھالوجی لیب بھجوا دئیےگئےہیں، جن کی رپورٹ آنے پر ہی موت کی اصل وجہ کا تعین کیا جا سکےگا۔حنین بلال گلشنِ راوی میں واقع نجی اسکول میں دسویں جماعت کا طالبعلم تھا ،طالب علم کےلواحقین نے ٹیچر پر تشدد کا الزام لگایا تھا۔لاہور پولیس نے مقدمہ درج کرکےاسکول ٹیچراور پرنسپل کو گرفتار کررکھاہے۔محکمہ تعلیم نےبھی اس واقعے کی انکوائری کے لیےکمیٹی تشکیل دے رکھی ہے جو اپنے طور پر تحقیقات کررہی ہے۔گزشتہ روز صوبائی وزیر نے بھی پولیس کو شفاف تحقیقات کی تلقین کی تھی اور ہدایت کی تھی کہ پولیس پوسٹ مارٹم رپورٹ مقتول کے ورثاء کے حوالے کرے۔واضح رہے کہ لاہور میں نجی اسکول کے ٹیچر نے معمولی غلطی پر 14 سالہ طالب علم حافظ حنین بلال پر تشدد کیا اور اسے حبس بے جا میں رکھا گیا تھا۔طالب علم کے باپ کی مدعیت میں ٹیچر راحیل اور پرنسپل نثار الحسن کے خلاف مقدمہ درج کیا گیا تھا، پولیس کا کہنا ہے کہ ملزمان سے مزید تفتیش جاری ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں