150

متنازعہ نصاب کا مشترکہ نتیجہ نذر حافی

ہماری زندگی دوہرے معیارات سے بھری ہے۔ ہمارے ہاں دینی مدارس اور دنیاوی تعلیم کے سکول بھی اسی طرح کھولے جاتے ہیں جس طرح دکانیں کھولی جاتی ہیں۔ چنانچہ ہمارے ہاں دکانوں کی طرح مدارس اور سکولوں میں بھی معیار نام کی کوئی چیز نہیں۔اکثر مقامات پر صرف تجوریاں بھری جاتی ہیں۔

چنانچہ آپ سروے کر کے دیکھ لیں، ہم سب کی بات نہیں کرتے لیکن اکثر مدارس و سکولوں کے منتظمین نظامِ تعلیم کی ابجدسے بھی واقف نہیں۔وہ یہ بھی نہیں جانتے کہ دنیاوی علوم کو دینی علوم سے کس بنیاد پر جدا کیا جاتا ہے؟یہ تقسیم درست ہے یا غلط اس کو رہنے دیجئے صرف یہ پوچھ لیجئے کہ کیا دین انگریزی، کیمسٹری، فزکس ، بیالوجی اور انفارمیشن ٹیکنالوجی کی تعلیم سے روکتا ہے؟ اگر نہیں روکتا تو پھر آپ انہیں دینی تعلیم کیوں نہیں کہتے؟آپ ان سے یہ بھی پوچھ کر دیکھئے کہ علوم عقلی سے کیامراد ہے؟ کیا ہمارے ہاں علوم غیر عقلی کی تعلیم بھی دی جاتی ہے؟ بہت کم جگہوں سے آپ کو تسلی بخش جواب ملے گا۔ جب آپ پوچھتے جائیں گے تو آپ کو احساس ہوگا کہ ہم نے ہر طرف ہوائی قلعے تعمیر کر رکھے ہیں۔ ایک طرف عام اور پرائیویٹ تعلیمی اداروں پر یہ فضا حاکم ہے اور دوسری طرف سرکاری سرپرستی میں “ایک قوم ایک نصاب “کے نام پر جوکچھ ہورہا ہے ،اُس سےبھی پتہ چل رہا ہے کہ وہاں بھی کچھ ایسے ہی ماہرین تعلیم تشریف فرما ہیں۔

یوں تو ہمارا دعوی ہے کہ دینِ اسلام ایک مکمل نظامِ حیات ہے۔ البتہ اس دعوے کے بعدہمارے پاس اسلامی نظامِ حکومت، اسلامی نظامِ صحت، اسلامی نظامِ تعلیم و تربیت ۔۔۔۔سمیت کوئی بھی نظام برائے زندگی ہمارے پاس موجود نہیں ہے۔ہر جگہ یہی جملہ دہرایا جاتا ہے کہ قرآن و سنت میں ہر چیز کا علم موجود ہے، اس سے آگے ہم کچھ سوچنے کیلئے تیار بھی نہیں ہیں ۔ویسے بھی سوچنے سے تو ہمیں موت پڑتی ہے۔البتہ سوچنے کی بات یہ ہے کہ جب اسلام ایک دین ہے تو اس کا مطلب یہ ہے کہ زندگی کے ہر شعبے کے حوالے سے اس کا اپنا ایک مخصوص نظام ِ زندگی موجود ہے۔ اس کا ہر مخصوص نظام اپنے خاص اور منفرد عناصر و اجزا پر مشتمل ہے۔

ہماری بھلائی اسی میں ہے کہ ہم اسلام کے سیاسی، اقتصادی، تعلیمی، فلاحی، مدیریتی۔۔۔جس نظام کی بھی بات کریں اُس میں کسی فرقے کو پُررنگ یا حذف کرنے سے باز رہیں۔ فرقہ وارانہ دھونس جمانے کے بجائے ہم پہلے مرحلے میں خود اسلامی نظامِ تعلیم و تربیت کی تعریف پر متفق ہو جائیں پھر اس کے عناصر و اجزا کی شناخت اور ان کے باہمی تعلق کو سمجھیں۔اس سے کسی کو انکار نہیں کہ بطورِ دین ، اسلام کا اپنا منفرد سیاسی، سماجی، اقتصادی، تعلیمی۔۔۔فلسفہ اور نظریہ موجود ہے۔ اس کا نظامِ تعلیم و تربیت باقی تمام اسلامی نظاموں کیلئے بنیادیں فراہم کرتا ہے۔ لیکن یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ آج تک ہم پاکستانی ایک اسلامی نظامِ تعلیم کی موجودگی کا اظہار نہیں کر سکے۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ دنیا کے ہر نظامِ تعلیم و تربیت کی طرح اسلامی نظامِ تعلیم و تربیت کے حوالے سے بھی متنوع علمی و تربیتی جہتوں ،فکری بنیادوں ، مستحکم اصولوں ، روشن اہداف ، گوناگون طریقوں اور ان گنت مراحل اور اس جیسے متعدد اجزا کو متعین کر کے مستندات کے پیمانے پر ایک اسلامی تعلیم و تربیت کے نظام کو وضع کیا جانا چاہیے۔

یہ سب بہت ضروری ہے چونکہ نظامِ تعلیم و تربیت، ریل کی اس پٹڑی کی مانند ہے جو معاشرے کو خاص اور متعین شدہ اہداف تک لے جاتا ہے۔ تعلیم و تربیت کی رو سے اگلے چند سالوں کیلئے ہمارے اہداف میں دانشوروں، سائنسدانوں، اور دیگر مفید افراد کی تعداد میں اضافہ، کرپشن سے چھٹکارا، رائج تعصبات کا خاتمہ، آسان انصاف کا حصول، انسانی حقوق کی علمبرداری، مکالمے کا فروغ، دلیل اور استدلال کا احیا، معیشت و دفاع کی مضبوطی، بیرونی دباو اور قرضوں سے نجات، بقائےباہمی کی فضا ، دیگر ادیان و مذاہب کا احترام، معاشرتی و سماجی مساوات، سیاسی و جمہوری انحرافات کی اصلاح ،قانون کی اہمیت کا شعور ، بدلتے حالات کا تجزیہ و تحلیل کرنے کی لیاقت،ماڈرن اور پوسٹ ماڈرن دنیا میں سیکھنے اور سکھانے کی صلاحیت ، دنیا کے بہترین، پُرامن اور خوشحال ممالک کی فہرست میں شامل ہونے کی کوشش جیسے نکات ہونے چاہیے۔ ہونے کو تو اور بھی بہت کچھ ہونا چاہیےلیکن جو ہو رہا ہے اُس سے تویہ لگ رہا ہے کہ یہ جو بظاہر ایک قوم ایک نصاب کا نعرہ ہے اس کی آڑ میں کچھ اور کیا جا رہا ہے۔ عوام کو تو یوں باور کرایا جارہا ہے کہ بس اب سکولوں سے بھی حافظ قرآن اور نماز و روزے کے پابند بچے نکلیں گے۔ اس خوشی میں والدین تو یہ سوچ بھی نہیں سکتے کہ اصل میں اُن کا بچوں کو سکول بھیجنے کا مقصد کیا تھا اور کیا ہونا
چاہیے؟

راقم الحروف کےنزدیک قرآن مجید کی سورتوں کو رٹوانے کا عمل لوگوں کا منہ بند کرنے کیلئے ہےدر اصل اس کے زیرِ سایہ بچوں کی کتابوں میں جو کچھ ڈالا جا رہا ہے اور جو نکالا جا رہا ہے، اُس سے آگے چل کر والدین کی بے چینی اور مسالک کے درمیان فاصلہ مزید بڑھے گا۔

یہ ایک فطری بات ہے کہ ہر باپ یہ چاہتا ہے کہ سکول اُس کے بچےکے عقیدے کو تبدیل نہ کرے۔ اپنے بچے کے عقیدے کا تحفظ یہ ہر مُسلم اورغیر مسلم باپ کی پہلی ترجیح ہے۔کوئی سُنی باپ یہ نہیں چاہتا کہ میرا بچہ سکول جانے کے کچھ عرصے کے بعد وہابی یا دیوبندی یا شیعہ ہوجائے، اسی طرح شیعہ والدین بھی ہر گز یہ برداشت نہیں کر سکتے کہ سکول میں اُن کے بچے کے عقائدکو سلفی، اہلحدیث یا قادیانی وغیرہ میں تبدیل کرنے کیلئے سوفٹ پاور استعمال کی جائے۔

دینِ اسلام جہاں علم کے حصول پر بہت تاکید کرتا ہے، جہاں یہ کہا گیا ہے کہ علم حاصل کرو خواہ چین جانا پڑے، یا علم اگر کافر سے بھی ملے تو حاصل کر لو وہاں یہ نہیں کہا گیا کہ علم کے ہمراہ عقیدہ بھی انہی سے لے لو۔ بظاہر ایک قوم اور ایک نصاب کی تحریک بہت خوب ہے لیکن اس سے ایک مخصوص فرقے کے افراد کی تعداد میں اضافے کیلئے استفادہ کیا جا رہا ہے۔لوگوں کے بچوں کے عقائد سے چھیڑخوانی والے متنازعہ نصاب کا واحد اور مشترکہ نتیجہ یہی نکلے گا کہ وقت کے ساتھ ساتھ مدرسوں اور مساجد کی طرح ہر فرقے اور کمیونٹی کے سکول بھی الگ الگ ہوجائیں گے اور یوں ایک قوم کئی اقوام میں بٹ جائے گی اور ایک نصاب کئی نصابوں کو جنم دے گا۔

لاپتہ افراد ۔۔۔ سیدھی اور صاف بات نذر حافی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں